Quantcast

شب خمارِ شوقِ ساقی رستخیز اندازہ تھا . دیوانِ غالب
یک ایک قطرے کا مجھے دینا پڑا حساب . دیوانِ غالب
شب کہ برقِ سوزِ دل سے زہرہ ابر آب تھا . دیوانِ غالب
اشعار کا دفتر کھلا . دیوانِ غالب. غزل نمبر۔12
محرم نہیں ہے تو ہی نوا ہائے راز کا . دیوانِ غالب. غزل نمبر۔11
نہ ہوگا یک بیاباں ماندگی سے ذوق کم میرا . دیوانِ غالب. غزل نمبر۔10
دل مرا سوزِ نہاں سے بے محابا جل گیا .  دیوانِ غالب. غزل نمبر۔2
نقش فریادی ہے کس کی شوخی تحریر کا؟ .  دیوانِ غالب. غزل نمبر۔1
بسکہ دشوار ہے ہر کام کا آساں ہونا . دیوانِ غالب. غزل نمبر۔15
نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ ہوتا تو خدا ہوتا
سب کہاں کچھ لالہ و گل میں نمایاں ہو گئیں
شوق، ہر رنگ رقیب سرو ساماں نکلا
نکتہ چین ہے غمِ دل اس کو سنائے نہ بنے
نقش فریادی ہے کس کی شوخی تحریر کا
منظور ہے گزارشِ احوال واقعی
مدت ہوئی یار کو مہماں کیے ہوئے
جہاں تیرا نقشِ قدم دیکھتے ہیں
ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے
یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا
ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر خواہش پہ دم نکلے
غنچہ نا شگفتہ کو دور سے مت دکھا، کہ یوں
دوست خمخواری میں میری سعی فرمائیں گے کیا
دل ناداں تجھے ہوا کیا ہے
دل ہی تو ہے نہ
درد منت کش دوا نہ ہوا
دائم پڑا ہوا ترے در پر نہیں ہوں میں
بازیچہ اطفال ہے دنیا مرے آگے
کوئی امید بر نہیں آتی
کی وفا ہم سے تو غیر اس کو جفا کہتے ہیں
بسکہ دشوار ہے ہر کام کا آساں ہونا
ایک ایک قطرے کا دینا پڑا حساب
عرض نیاز عشق کے قابل نہیں رہا
آہ کو چاہیے اک عمر اثر ہونے تک