ہم نے کوئی بھی عکس چرانے نہیں دیا

ہم نے کوئی بھی عکس چرانے نہیں دیا

ہم نے کوئی بھی عکس چرانے نہیں دیا جس نے چراغِ ہجر بجھانے نہیں دیا اُس نے کوئی ملال بھی آنے نہیں دیا دنیا کو اپنی آنکھ سے تیرے جمال کا ہم نے کوئی بھی عکس چرانے نہیں دیا جب بھی خیال…

بہتان بن کر بھلا کیسے جیا جا سکتا ہے

بہتان بن کر بھلا کیسے جیا جا سکتا ہے

بہتان بن کر بھلا کیسے جیا جا سکتا ہے پیالہ زہر کا خود سے کیسے پیا جا سکتا ہے بہت ہوتے ہیں ایسے اپنے سے اپنے جن کے بنا بھی جیا جا سکتا ہے مختصر ہے مگر تکلیف دہ ہے بہت بدل…

میلاد نبی کا مناتے رہنا

میلاد نبی کا مناتے رہنا

میلاد نبی کا مناتے رہنا نصیب تم اپنے بناتے رہنا آئے کوئی چاہے نہ آئے سب مسلمانوں کو بلاتے رہنا برسیںگی رحمتیں رب کی محفل گھر میں سجاتے رہنا گھروں ،بازاروںپہ کروسجاوٹ ہاتھوںمیں جھنڈے لہراتے رہنا پڑھتے رہودرودنبی پر سلام کے تحفے…

شوق یه که لزت دنیا بھی هم کو چاهیۓ

شوق یه که لزت دنیا بھی هم کو چاهیۓ

شوق یه که لزت دنیا بھی هم کو چاهیۓ اس پر یه اصرار که جنت بھی هم کو چاهیۓ شهنیله حسین…

کیسے کریں قیام اب تیرے دیار میں

کیسے کریں قیام اب تیرے دیار میں

کیسے کریں قیام اب تیرے دیار میں گم ہو چکا ہے وہم کے گردو غبار میں اِک شخص تجھ کو ڈھونڈتے قرب و جوار میں لاگو ہیں جس پہ موسمِ ہجراں کے ضابطے دامن اسی کا چاک ہے اب کے بہار میں…

لاحاصل

لاحاصل

اب بھی ہر خواب ادھورا تو دعا لاحاصل اپنی اِس عمر کا حاصل بھی رہا لا حاصل جب کسی رنج ومسرت سے ہی رغبت نہ رہی تجھ سے ملنے کا ارادہ بھی گیا لاحاصل حاکمِ وقت تیرے عدل کے ایوانوں میں ہم…

کھیل دنیا میں تیرے نام پہ ہارے کیا کیا

کھیل دنیا میں تیرے نام پہ ہارے کیا کیا

کھیل دنیا میں تیرے نام پہ ہارے کیا کیا جس نے آنچل میں سجائے ہیں ستارے کیا کیا اُس کی آنکھوں میںہیں صبحوں کے نظارے کیا کیا اپنی ہر جیت کو نیلام کیا تیرے لئے کھیل دنیا میں تیرے نام پہ ہارے…

چاند جب اُس کی ہتھیلی پہ ٹھہر جاتا ہے

چاند جب اُس کی ہتھیلی پہ ٹھہر جاتا ہے

چاند جب اُس کی ہتھیلی پہ ٹھہر جاتا ہے جو ہمیں دیکھ کے چُپ چاپ گزر جاتا ہے دل سے کب اُس کے تغافل کا اثر جاتا ہے ماند پڑ جاتے ہیں صبحوں کے ِطلسمات سبھی چاند جب اُس کی ہتھیلی پہ…

جنگ نوحہ جوان لاشوں کا

جنگ نوحہ جوان لاشوں کا

جنگ نوحہ جوان لاشوں کا یہ جو تہذیب کی کہانی ہے سب معیشت کی ترجمانی ہے کارخانوں کی چمنیوں کا دھواں ننگ و افلاسِ زندگانی ہے نُورِ سرمایہ کی یہ جلوہ گری میری آنکھوں کی خوں فشانی ہے کتنے قرنوں سے نسلِ…

تمہاری باتیں

تمہاری باتیں

مجھ کو معیوب سی لگتی ہیں تمہاری باتیں خود سے منسوب سی لگتی ہیں تمہاری باتیں جانے کیا بات ہے، کیا راز چھُپا ہے اِن میں کتنی معجوب سی لگتی ہیں تمہاری باتیں شام ہوتے ہی کسی درد میں ڈھل جاتی ہیں…

میں کہیں گم ہوگیا ہوں

میں کہیں گم ہوگیا ہوں

میں کہیں گم ہو گیا ہوں جب سے تم ہو گیا ہوں بجھتی ہوئی لو جیسے بہت مدہم ہوگیا ہوں اسقدر زخم ملے ہیں اب تو مرہم ہوگیا ہوں تیری گلیوں کی جیسے پیچ و خم ہوگیا ہوں قیاسوں میں ہوں جیتا…

تلخیء زیست

تلخیء زیست

زندگی درد و مصائب سے بھری دنیا میں ہم نے جِس طور گزاری ہے سنائیں کیسے اِک غم عشق کا ہو بوجھ تو سہ پائیں اسے اِس غمِ دہر کے صدمات اٹھائیں کیسے ہم نے کچھ تیرا بگاڑا تھا نہ دنیا کا…

زندگی ہجر کی کہانی ہے

زندگی ہجر کی کہانی ہے

زندگی ہِجر کی کہانی ہے اِس کہانی میں جو کہانی ہے اب تیرے رُوبرو سنانی ہے چاند ہے، رات ہے، سمندر ہے اور یادوں کی راجدھانی ہے اِک دیا آج بھی جلانا ہے پر سحر آج بھی نہ آنی ہے ہم نے…

گھوڑے پہ چڑھ کے کوئی سکندر نہیں ہوا

گھوڑے پہ چڑھ کے کوئی سکندر نہیں ہوا

گھوڑے پہ چڑھ کے کوئی سکندر نہیں ہوا دو شعر لکھ کے کوئی سخنور نہیں ہوا اس عہدِ بے ضمیریِ حرف و قلم میں بھی لفظوں کا کاری گر تو قلندر نہیں ہوا قدآوری کا شوق تومجھ کو بھی تھا مگر اب…

ہو سایہ تیرے سر پہ بہاروں کی رِدا کا

ہو سایہ تیرے سر پہ بہاروں کی رِدا کا

ہو سایہ تیرے سر پہ بہاروں کی رِدا کا ہونٹ کی حلاوت نہ کسی دستِ حنا کا اب کوئی بھروسہ بھی نہیں اہلِ وفا کا اے میری محبت کا بھرم توڑنے والے اندازہ نہیں تجھ کو میرے کرب و بلا کا وہ…

دل تیرے درد محبت میں گرفتار بھی ہے

دل تیرے درد محبت میں گرفتار بھی ہے

دل تیرے دردِ محبت میں گرفتار بھی ہے اور اِس غم سے رہائی کا طلبگار بھی ہے تیرے ہر حکم کی تعمیل ضروری تو نہیں ہاں مجھے تیری کِسی بات سے اِنکار بھی ہے ایک اِسرار کہ اب تک نہ کھُلا ہے…

واعظ خوش بخت کے نام

واعظ خوش بخت کے نام

اے میرے واعظِ خوش بخت تیرے ہونٹوں سے مجھ کو یہ درد کے قصے نہیں اچھے لگتے تیرے کردار کی دورنگی سے نفرت ہے مجھے یہ تیرے عجز کے دعوے نہیں اچھے لگتے یہ گناہوں کی، ثوابوں کی ، تجارت کیا ہے؟…

محبت سے خوف آتا ہے

محبت سے خوف آتا ہے

زمانے بھر کی عداوت سے خوف آتا ہے کبھی کبھی تو محبت سے خوف آتا ہے فریب گاہِ رفاقت میں ہر گھڑی ہم کو مسرتوں کی حقیقت سے خوف آتا ہے زریں منور…

محبت کو دنیا میں مشہور کر دوں

محبت کو دنیا میں مشہور کر دوں

محبت کو دنیا میں مشہور کر دوں تجھے بھی محبت میں رنجور کر دوں اگر شیشہء خواب کو چُور کر دوں تیری آنکھ کی پُتلیوں میں سما کر رہِ زندگانی کو پُرنور کر دوں تجھے اپنی دھڑکن میں محصور کر کے خیالوں…

تمہاری یاد آئی

تمہاری یاد آئی

اندھیرے دُور ہوئے تو تمہاری یاد آئی قریبِ نُور ہوئے تو تمہاری یاد آئی گناہگار تھے جب تک گریز پاہی رہے جو بے قصور ہوئے تو تمہاری یاد آئی زریں منور…

نہ محبت کا نہ کدورت کا

نہ محبت کا نہ کدورت کا

نہ محبت کا نہ کدورت کا تجھ سے ناطہ ہے بس ضرورت کا ہم صلیبوں پہ جھولنے والے! پاس رکھتے ہیں سچ کی حرمت کا بھوک اگنے لگی ہے کھیتوں میں کتنا کڑوا ہے پھل یہ محنت کا مفلسی رو رہی ہے…

شام ہوتی ہے تو وحشت نہیں دیکھی جاتی

شام ہوتی ہے تو وحشت نہیں دیکھی جاتی

شام ہوتی ہے تو وحشت نہیں دیکھی جاتی پھول سے چہروں پہ حسرت نہیں دیکھی جاتی ہم سے موسم کی عداوت نہیں دیکھی جاتی اب کسی چاپ نہ آہٹ کا گماں ہوتا ہے دل سے تنہائی کی وحشت نہیں دیکھی جاتی جابجا…

ہر توقع ہی اب اٹھا دی ہے

ہر توقع ہی اب اٹھا دی ہے

ہر توقع ہی اب اُٹھا دی ہے اُس نے جو بھی ہمیں سزا دی ہے اُس کے بدلے میں بس دعا دی ہے ہم نے دل کے نصابِ ہِجرت میں تیری یادوں کو ہی جگہ دی ہے ایک کشتی تھی آرزوئوں کی!…

سمٹے ہوئے ہیں آنکھ میں حسرت کے سلسلے

سمٹے ہوئے ہیں آنکھ میں حسرت کے سلسلے

سمٹے ہوئے ہیں آنکھ میں حسرت کے سلسلے صدمات ِماہ سال کی شِدّت کے سلسلے انسانیت کا روگ ہیں غربت کے سلسلے بکھری ہوئی ہیں چارسُو خوابوں کی کرچیاں سمٹے ہوئے ہیں آنکھ میں حسرت کے سلسلے دیکھے کوئی تو جادہء حُزن…