مرکزی اسلامک سنٹر ویانا میں آسٹریا بھر سے مختلف ممالک کی مسلم کمیونٹی کے 312 اماموں اور علماء کرام کا اجلاس منعقد ہوا

AUSTRIA AMAM

AUSTRIA AMAM

ویانا (اکرم باجوہ) مرکزی اسلامک سنٹر ویانا میں 14 جون کی دوپہر آسٹریا بھر سے مختلف ممالک کی مسلم کمیونٹی کے 312 اماموں اور علماء کرام کا انتہا پسندی ،زبردستی اور دہشت گردی کے خلاف اجلاس منعقد ہوا اور اجلاس کے بعد مشترکہ اعلامیہ جاری کیا گیا۔

مشترکہ اعلامیہ کا متن یہ تھا آسٹرین امام اور علماء کرام پوری دنیا میں انتہا پسندی ،زبردستی اور دہشت گردی کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیںاور کہاجس نے کسی انسان کا قتل کیا اس نے پوری انسانیت کا قتل کیا اور کسی نے کسی انسان کی جان بچائی اُس نے پوری انسانیت کی جان بچائی ۔مسلمان کی نشانی ہے کہ جس کے ہاتھ اور زبان سے دوسرا محفوظ رہے اور انسانی جان کی قدر و قیمت اور اہمیت کو جانے۔

اسلامی نظریاتی کونسل آسٹریا کے صدر ابراہیم نے مشترکہ اعلامیہ میں حضرت محمد ۖ کے کچھ مختلف فرمان پڑھ کر سنائے اور مذید کہا کہ اس مشترکہ اعلامیہ کو مدنظر رکھتے ہوئے تمام امام اور علماء کرام اس پر عمل کرنے کے پابند ہونگے اور جو اس مشترکہ اعلامیہ پر عمل نہ کرئے گا اُس کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑئے گا۔

تمام آسٹریا کے امام اورعلماء کرام کی زمہ داری ہے کہ ہم سب ایک دوسرئے کو ساتھ لے کر چلیں اور مل جل کر اکٹھا رہیں اور موجودہ حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے اپنے آگے پیچھے نظر رکھیں۔ اور اُنہوں نے مذید کہا سچائی کو مدنظر رکھتے ہوئے آزادی اور امن کے ساتھ عورتوں اور مرد وں کے ساتھ ایک جیسا حسن و سلوک اور انصاف کریں اور ہم سب اُمید رکھتے ہیں کہ جس طرح ہم امن و امان پر عمل کرتے ہیں اور آپ سب لوگ بھی امن و امان سے رہیں گے اور دوسروں کو بھی امن سے رہنے دیں گے۔مشترکہ اعلامیہ کے بعد اماموں نے مشترکہ اعلامیہ پر میڈیا کے سامنے دستخط کیے ۔آخر میں اُمت مسلمہ کے لیے خصوصی اجتمائی دعا کی۔