مقبول بٹ شہید نے کشمیری قوم کے اقتدار اعلی کے لیے اپنی جان کا نذرانہ پیش کیا، شوکت علی کشمیری

Sardar Shukat Ali

Sardar Shukat Ali

برمنگھم (ایس ایم عرفان طاہر سے) مقبول بٹ شہید نے کشمیری قوم کے اقتدار اعلیٰ کے لیے اپنی جان کا نذرانہ پیش کیا، قوموں کو تقسیم، تفرقے اور تصادم سے بچانے کے لیے انکے بنیا دی حقوق میں عدل و انصاف کا راستہ اختیا ر کرنے کی ضرورت ہے، 11 فروری تجدید عہد کا دن شہید مقبول بٹ کے نظریہ خود مختاری کو اپنا تے ہو ئے ہی کشمیری اپنی آخری منزل آزادی حاصل کر سکتے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار چیئرمین یونائیٹڈ کشمیر پیپلز نیشنل پارٹی سردار شوکت علی کشمیری نے یہا ں مقامی ہوٹل میں یو کے پی این پی برمنگھم کے عہد یداران اور کارکنان سے خصوصی گفتگو کرتے ہو ئے کیا۔ اس موقع پرسردارخالد رفیق خان، ارم کشمیری، آفتاب خان، قمر خلیل، مظہر مصطفی، سید ایچ شاہ، شفیق احمد، سید منصور حسین شاہ ، محمد ندیم خان، وقار اشرف، محمد سعید خان اور دیگر بھی موجود تھے۔

سردار شوکت علی کشمیری نے کہاکہ برادری ازم تفرقوں گروہوں اور تمام تر تقسیموں سے ہٹ کر فلسفہ انسانیت کو سمجھنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہما ری انا پرستی اور خود غرضیو ں نے ہمیں محض تنزلی و پستی اور تباہی و بربادی سے دوچار کیا ہے ۔انہوں نے کہاکہ مسلم کانفرنس ، جماعت اسلامی اور دیگر جما عتوں نے شہید مقبول کی زندگی میں انکے نظریا ت اور کردار سے اختلاف رکھتے ہو ئے انکی کھل کر مخالفت کی آج انکے بنیا دی دشمن انکے مجا ور بننے کی کوشش کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ جے کے ایل ایف آج اپنے آپ کو انکا وارث کہلواتی ہے جبکہ کوئی بھی شہید کے نظریات اور ویثرن سے آشنا نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ کشمیری قوم کو غلامی سے نجا ت حاصل کرنے کے لیے اپنے حقیقی مشن کو سمجھنا ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ دنیا میں مکالمہ اور بات چیت کے زریعہ سے ہی مہذب معاشرے کسی بھی تنازعہ یا مسائل کا حل تلاش کرتے ہیں جنگ وجدل اور تصادم مزید الجھنوں اور تاریکیوں میں ڈوبنے کا نام ہے۔

انہوں نے کہا کہ نا انصافی تو ہما رے معاشروں میں یہ ہے کہ عوام کے حقوق کی بات کرنے والوں کو غدار اور ایجنٹ سمجھا جاتا ہے۔ انہوں نے کہاکہ آزادی کے متوالوں کا خون کبھی بھی رائیگاں نہیں جائیگا ہمیشہ اخلاص اور حق و صداقت کو ہی فتح نصیب ہو گی۔