سوشل میڈیا واٹس ایپ پر گلوبل وادیٔ سخن کے زیرِ اہتمام عالمی مشاعرہ بنام اسلم محمود

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

سوشل میڈیا واٹس ایپ معروف و مشہو’ر ادبی اُرد’و تنظیم ‘گلوبل وادیٔ سخن ‘ کے زیرِ اہتمام ایک شاندار عالمی مشاعرہ کا انعقاد عمل میں آیا جس میں دنیائے ادب کے نامور شعرائے کرام و شاعرات نیز ادبی شخصیات نے اپنی شراکت سے مشاعرے کو بامِ عروج تک پہونچانے میں معاونت فرماکر مشاعرے کو کامیابی سے ہمکنار کیا مذکورہ تنظیم فروغِ اردو کے تحت اپنی نمایاں اور گرانقدرخدمات سے سوشل میڈیا پر عرصۂ دراز سے اپنی ایک خاص شناخت قائم کرنے میں کامیابی کا پرچم بلند کئے ہوئے ہے اور اپنے محرکانہ عمل و ادبی خدمات سے دنیائے ادب میں ایک خاص مقام حاصل ہے جو لائقِ افتخار و ستائش ہے ۔ یہ بات انتہائی اہمیت کی حامل ہے کہ جب سے یہ تنظیم کا قیام عمل میں آیا آج تک اس کی متحرک سرگرمیوں میں ذرا بھی کمی نہیں آئی بلکہ آئے دن سمینار’ مشاعرے ‘مشاعرۂ شاعرات’ موضو عاتی شعری ‘ نثری ادبی پروگراموں کے ذریعے متاثر کر رہی ہے۔چونکہ اس میں جن ادبی شخصیات کی جدو جہدو کاوشات شامل ہیں۔

اُن میں خصوصاََ جناب افروز عالم صاحب صدرِ تنظیم( کویت)جناب ندیم نیر صاحب سرپرست(انڈیا) محترمہ سمن شاہ صاحبہ

نگراں(فرانس) جناب ضیاء ضمیر صاحب نائب صدر(الہند) جناب احمد معراج صاحب(کلکتہ) اور ڈاکٹر فرید قمر سکریٹری اور جنرل سکریٹری شیخ عامر قریشی صاحب(لکھنؤ)کے اسمائے گرامی قابلِ ذکر ہیں

معروف شاعر و ادیب جناب اسلم محمود صاحب کے نام سے منسوب اس عالمی مشاعرے کی صدارت عالی جناب مہتاب قدر (جدّہ) نے فرمائی اور نظامت کے فرائض شیخ عامر قریشی صاحب نے بہت سلیقے سے ادا کیا ۔

بطورِمہمانِ خصوصی محترمہ ریحانہ رو’حی صاحبہ (پاکستان) اور مہمانِ اعزازی جناب عامر قدوائی صاحب (انڈیا) آن لائن موجود رہے

نائب صدر جناب ضیاء ضمیر صاحب نے مشاعروں کی اہمیت بتاتے ہوئے افتتاحی خطبہ میں زمانۂ قدیم کے مشاعروں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ بادشاہوں ‘راجاؤں ‘اور نوابوں کے دور میں بھی اپنی مدح سرائی کیلئے شعراء کی حوصلہ ہوتی رہی ہے بڑے شعراء کو وظائف کے لالچ دے کر اپنی شان میں قصیدے رقم کرائے جاتے رہے ہیں ۔اور آج بھی اگر تجزیہ کریں تو تو محسوس کریں گے کہ عہدِ حا ضر میں بھی محبانِ ادب مشاعرے کرواکر اُرد’وادب کو جلا بخش رہے ہیں چاہے وہ سوشل میڈیا ہو یا عوامی مشاعرے جس میں خاصی کثیر تعداد میں اردو شاعری کے نام پر لوگ یکجا ہورہے اُرد’ و کے لئے نیک فال ہے۔

مہتاب قدر اور ضیاء ضمیر صاحبان کے صدارتی تقاریر کے بعد مشاعرہ کا آغاز حمد و نعت سے ہوا بعد ازیں با قاعدہ مشاعرہ اشرف یعقوبی کے کلام سے غزلوں کا سلسلہ شروع ہوا ۔منتخب اشعار مندرجہ ذیل قارئین کی نذر نام رب کا جب لیا ہم نیسفر کے درمیاں خیر سے گذری مسافت خیروشر کے درمیاں ۔۔۔۔۔اشرف یعقوبی

خوشی نہ رنج و الم بولتے ہیں محفل میں ذہین لوگ ہیں کم بولتے ہیں محفل میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مہتاب قدر (جدّہ)
یہ کس نے طاق تماشہ میں رکھ دیا ہے مجھے یہ دن کے وقت ہی مجھکو جلا دیا کس نے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسلم محمود
کسی سے کوئی ناطہ یا تو ہم جوڑا نہیں کرتے ملا لیں ہاتھ تو پھر عمر بھر چھوڑا نہیں کرتے۔۔۔۔۔۔ریحانہ روحی (پاکستان)
عجیب طرح کی حالت ہے میری بے احوال عجیب طر ح کی بے ماجرا اُداسی ہے۔۔۔۔۔۔عرفان ستار(ٹورینٹوکنیڈا)
جس کو کبھی ہوا کی حمایت نہیں ملی شاید وہی چراغ ہمارے مکاں میں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ندیم نیر (انڈیا)
چمن رَوندا گیا ہے بے حِسی سے پرندوں کی ہنسی سہمی ہوئی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سمن شاہ (فرانس)
دولتِ نام ونسب مجھکو بھی حاصل ہے مگر چاہتا ہوں کہ میں کردار سے پہچانا جاؤ ں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔واصف فاروقی
ابروئے خم دار کی سفّاکیاں یار میرا صاحبِ شمشیر ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عامر قدوائی (کویت)
اچھے لگتے ہیں غم میں آنسو’ بھی ان چراغوں کو رات بھر رکھنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر قمر سرور (ممبئی)
امیرِ شہر تری بندشیں معاذاللہ فقیر اب تری بستی سے جانا چاہتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ندیم فرّخ (ہندوستان)
لمحہ لمحہ مرے ہاتھوں سے سرکتا ہوا دن اور آسیب زدہ دل میں اترتی ہوئی شام۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ضیاء ضمیر
ہر آنکھ نے آواز مہکتی ہوئی دیکھی وہ مصرعۂ تر غنچۂ گفتار سے نکلا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاشم علی ہمدم(پاکستان)
یہ تنگ زمیں موجِ لہو’ مانگ رہی ہے در پیش ہمیں پھر سے کوئی کرب و بلا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حمید گوہر (اجین)
عمر بھر آنکھ میں جس کی میں کھٹکتی ہی رہی وہ کرے میری پزیرائی نہیںہو سکتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رئیسہ خمار
اپنی پاری کھیلتے ہیں زندگی کی کریز پر موت کا bollerجب آئے بولڈ ہو جاتے ہیں لوگ۔۔۔۔۔ذکی انجم دیوبندی
ہر رشتے کی اپنی حدت ہوتی ہے مٹی رکھ کر چاک گھماتا رہتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سلیم محی الدّین
جذبۂ عشق کی شدت میں چلے آئے ہیں ہم تھے جیسے اسی حالت میں چلے آئے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مینا خان
اب کیا کریں جو دل پہ کسی کے لگا ہو زخم نشتر ہماری باتوں کی سچائیوں میں تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شفیق رائے پوری
مری دیوار پر کتنے کلنڈر ہوگئے بو’ ترے آنے کا وعدہ بھی قیامت سے ذرا کم ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نغمہ نور(کلکتہ)
زمیںِ کی مانگ یونہی امن سے نہیں بھرتی لہو’ فضا میں اچھلنا بہت ضروری ہے۔۔۔۔۔ملک محی الدّین (سعودی عرب)
یہ کارگاہِ جنوں بھی عجیب ہوتا ہے کہ اس کے سائے میں ہر انقلاب پلتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عرشی بستوی (کشی نگر)
اخیر میں صدرِ تنظیم جناب افروز عالم اور سرپرست جناب ندیم نیر صاحب نے تمام آن لائن شعرائے کرام و شاعرات نیز
شرکائے محفل کا شکریہ ادا کرتے ہوئے مشاعرہ کے اختتام کا اعلان کیا ۔۔۔۔خیر اندیش ۔ عر شی بستوی

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood

 World Poetry Named Aslam Mahmood


World Poetry Named Aslam Mahmood