بول ٹی وی کو پانامہ اور ڈان لیکس پر سچ دکھانے کی وجہ سے بند کرنا قابل مذمت ہے۔ عوامی تحریک ڈنمارک

Pakistan Awami Tehreek Denmark

Pakistan Awami Tehreek Denmark

کوپن ہیگن (اسپیشل رپورٹر) کل ورلڈ پریس فریڈم ڈے تھا آزادی صحافت کا عالمی دن منانے کا مقصد پیشہ ورانہ فرائض کی بجاآوری کے لیے پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا کو درپیش مشکلات، مسائل، دھمکی آمیز رویے اور صحافیوں کی زندگیوں کو درپیش خطرات سے متعلق دنیا کو آگاہ کرنا تھا۔

ترقی یافتہ ممالک کی حکومتیں اپنے عوام کے شعور میں اضافے کے لیے آئے دن پریس کو زیادہ سے آزادی اور وسائل مہیا کرتی رہتی ہیں لیکن اسکے برعکس عین میڈیا کی آزاد ی کے دن حکومت پاکستان کی جانب سے پاکستان کے صف اول کے چینل کو بند کیا جانا آزادی اظہار کا گلا گھونٹنے کے متراد ف ہے۔

بول ٹی وی کو پانامہ لیکس اور ڈان لیکس پر مکروہ حکومتی کرداروں کو بے نقاب کرنے کی پاداش میں بند کیا گیا ہے۔ وزیراعظم کے مشیر اگر انہیں اس طرح کے غلط مشورے دے رہے ہیں کہ ٹی وی چینلز کو بند کرکے آپ اپنے جرائم چھپا لیں گے تو یہ آپکی بھول ہے۔

پاکستان عوامی تحریک اس مشکل وقت میں بول چینل کے ساتھ کھڑی ہے اور آزادی اظہارکی پابندی پہ صدائے احتجاج بلندکرتی ہے پاکستان عوامی تحریک ڈنمارک نہ صرف اپیل کرتی ہے کہ پیمرا حکومتی مفادات کے بجائے، آزادی اظہارکا تحفظ کرے۔ بلکہ قومی سلامتی اور انصاف اور کے ادارے اس حکومتی غنڈہ گردی کا نوٹس لیں اور بول پہ پابندی فی الفور ختم کی جائے۔