مشہور ماہرِ چشم ڈاکٹر شیراز حسن سے کامران غنی صبا کی خاص بات چیت

Dr Sheeraz Hassan

Dr Sheeraz Hassan

پٹنہ : آنکھ اللہ کی عظیم نعمت ہے، جس کی بدولت ہم دنیا کی خوب صورتی اور رنگا رنگی سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔ ہمیں چاہیے کہ خدا کی اس نعمت کی دیکھ بھال اور حفاظت کریں۔ ان خیالات کا اظہار مشہور ماہرِ چشم ڈاکٹر شیراز حسن نے آج یہاں المنصور ایجوکیشنل اینڈ ویلفیئر ٹرسٹ کے لیے کامران غنی صبا کو دئیے انٹرویو میں کیا۔ یہ انٹرویو ٹرسٹ کی فیس بک ٹائم لائن سے براہ راست نشر کیا گیا۔

کامران غنی صبا نے ڈاکٹر شیراز حسن سے آنکھوں کی بیماریوں اور ان کی دیکھ بھال سے متعلق مختلف سوالات پوچھے ، ڈاکٹر شیراز حسن نے بہت ہی تفصیل اور وضاحت کے ساتھ سارے سوالات کے جواب دئیے۔ کچھ سوالات ناظرین کی طرف سے بھی پوچھے گئے۔

ڈاکٹر شیراز حسن نے الکٹرانک آلات کو آنکھوں کے لیے مضر قرار دیتے ہوئے کہا کہ چھوٹے بچوں میں آنکھوں کی زیادہ تر بیماریاں کمپویٹر، لیپ ٹاپ اور اسمارٹ فون کے غیر ضروری استعمال سے ہوتی ہیں۔ انہوں نے کمپویٹر کا استعمال کرنے والے پیشہ ور لوگوں کو مشورہ دیا کہ وہ مستقل کئی گھنٹوں تک کمپیوٹر یا لیپ ٹاپ پر بیٹھنے سے گریز کریں اور وقفے وقفے سے اسکرین سے اپنے آپ کو دور رکھنے کی کوشش کریں۔ ڈاکٹر شیراز حسن نے غیر متوازن غذا کو آنکھوں کی مختلف بیماریوں کا سبب بتایا۔ انہوں نے اس مفروضے کو غلط قرار دیا کہ کچھ خاص غذائوں کے استعمال سے آنکھوں کی روشنی بڑھتی یا گھٹتی ہے۔ اس سوال کے جواب میں کہ عینیات (OPHTHALMOLOGY) میں روزگار کے کتنے مواقع ہیں، ڈاکٹر شیراز حسن نے بہت ہی تفصیل سے اس شعبہ کی باریکیوں سے آگاہ کیا۔

انہوں نے بتایا کہ اس شعبہ میں روزگار کے بہت سارے مواقع ہیں لیکن یہ ایک مہنگا اور محنت طلب شعبہ ہے، یہاں آنکھوں کی جانچ کے لیے بہت سارے آلات لاکھوں اور کروڑوں روپے میں آتے ہیں۔ ڈاکٹر شیراز حسن نے بتایاکہ جب انہوں نے اس اس شعبہ میں قدم رکھا تھا تو ان کا خیال تھا کہ چھوٹی سی آنکھ کے بارے میں زیادہ پڑھنے اور ریسرچ کرنے کی ضرورت نہیں ہوگی لیکن جیسے جیسے وہ اس شعبہ میں آگے بڑھتے گئے ان کی حیرت میں اضافہ ہوتا گیا، انہوں نے بتایا کہ آنکھ بظاہر جسم کا ایک چھوٹا سا حصہ ہے لیکن اس کے اندر حیرت انگیز قدرتی کرشمے چھپے ہوئے ہیں۔

ڈاکٹر شیراز حسن نے اردو شعر و ادب کی بھی جم کر تعریف کی۔ انہوں نے کہا اردو دنیا کی سب سے پیاری اور میٹھی زبان ہے۔ اس زبان کی نفاست اور خوب صورتی ہی اس کی مقبولیت کی سب سے بڑی وجہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ عوامی خدمت سے انہیں روحانی خوشی ملتی ہے۔اسی لیے راجندرنگر میں اپنا ذاتی کلنک ہونے کے باوجود انہوں نے عالم گنج اور پچھم دروازہ میں سٹلائیٹ سنٹر کا اضافہ کیا ہے تاکہ اس علاقہ کے بزرگ مریضوں کو دور جانے کی مشکلوں سے بچایا جا سکے۔