منہاج القرآن انٹرنیشنل ڈنمارک نے حالات کا درست ادراک کرتے ہوئے ڈینش معاشرے میں مساجد کے کردار کے موضوع پر ایک مباحثے کا اہتمام کیا

ڈنمارک (محمد منیر) پچھلے چند سالوں سے ڈنمارک کی سیاست اینٹی مسلم ہونا شروع ہوئی اور آج کم و بیش ہر ڈینش سیاسی جماعت کی سیاست اسی ایشو کے گرد گھوم رہی ہے، منہاج القرآن انٹرنیشنل ڈنمارک نے حالات کا درست ادراک کرتے ہوئے ڈینش معاشرے میں مساجد کے کردار کے موضوع پر ایک مباحثے کا اہتمام کیا، جس میں ڈنمارک کے تمام سیاسی مسلمان راہنماؤں، سیاسی جماعتوں اور چیدہ چیدہ سماجی شخصیات کو مدعو کیا گیا تھا، جن میں تحریک انصاف ڈنمارک کے صدر کی قیادت میں انکا وفد، تعصب کے خلاف یورپین نیٹ ورک کے کوارڈی نیٹر باشی قریشی، ممبر پارلیمنٹ بدر شاہ، غیر ملکیوں کے خلاف نفرت روکنے کے ادارے کے صدرقاسم اعجاز، مسلم ڈائیلاگ کے ترجمان زبیر بٹ، اسلامک کلچر سنٹر آما کے صدر گلزار شاہ، ممبر پارلیمنٹ سید اعجاز حیدر شاہ بخاری، صدر پاکستان عوامی تحریک ڈنمارک،چوہدری غلام محی الدین، تحریک کشمیر ڈنمارک کے سرپرست میاں منیر، صدر اسلامک کلچرل سنٹر آما، گلزار شاہ، سابقہ ممبر پارلیمنٹ ندیم فاروق، ق لیگ ڈنمارک کے صدر، چیئرمین پاکستان کمیونٹی فورم ڈنمارک، ممبر پارلیمنٹ قاسم نذیر احمد، ممبر پارلیمنٹ یاسر احمد، معروف سیاسی لیڈر سید توقیر شاہ، منہاج میڈیکل کونسل کے جنرل سیکرٹری ڈاکٹر عباس شامل تھے خصوصی مقرر نو مسلم ڈینش نوجوان کیسپر میچھسن تھے جو ڈنمارک کی آرہوس یونیورسٹی میں ڈینش معاشرے میں مسلماںوں کے کردار پہ ڈاکٹریٹ کررہے ہیں انہوں نے بتایا کہ ڈنمارک میں آج سے پچاس سال پہلے پہلی مسجد قائم ہوئی یہاں تین لاکھ مسلمان آباد ہیں ہیں جن کی آبادی میں پچھلے دس سال میں چالیس فیصد اضافہ ہوا ان میں سے ستر فیصد ڈینش نیشنلٹی رکھتے ہیں ایک سو اکاون مساجد رجسٹرڈ ہیں ہیں لیکن مسلمانوں کو عملی کردار معاشرے میں بہت کم ہے ڈنمارک کا سب سے بڑا مسئلہ مسلمانوں کے خلاف بڑھتی نفرت ہے اسکا حل مساجد کو صرف عبادات تک محدود رکھنے کے بجائے ایک سوشل سنٹر بنانا ہے انہوں نے کہا کہ انٹگریشن کا بہترین حل یہ حدیث ہے کہ اچھا بولو یا چپ رہو اپنے پڑوسی کے ساتھ حلیم بنو اور اچھا سلوک رکھو، آخر میں منہاج القرآن کے صدر نے کیسپر کو کتب اور تحائف پیش کیئے۔ تمام شرکاٗ نے معاشرے میں مسلمانوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے کاوشیں کرنے پر منہاج القرآن انٹرنیشنل ڈنمارک کے کردار کو سراہتے ہوئے کہا کہ یہ کام منہاج القرآن والے ہی کرسکتے ہیں اور ہم آئندہ بھی انکے شانہ بشانہ ہونگے۔

Minhaj-ul-Quran - Denmark

Minhaj-ul-Quran – Denmark

Minhaj-ul-Quran - Denmark

Minhaj-ul-Quran – Denmark

Minhaj-ul-Quran - Denmark

Minhaj-ul-Quran – Denmark

Minhaj-ul-Quran - Denmark

Minhaj-ul-Quran – Denmark

Minhaj-ul-Quran - Denmark

Minhaj-ul-Quran – Denmark

Minhaj-ul-Quran - Denmark

Minhaj-ul-Quran – Denmark

Minhaj-ul-Quran - Denmark

Minhaj-ul-Quran – Denmark

Minhaj-ul-Quran - Denmark

Minhaj-ul-Quran – Denmark