اقلیتوں سے ملاقات پروگرام سے رکن اسمبلی نظام آباد بیگالہ گنیش گپتا کا خطاب

Begala Ganesh Gupta Visit

Begala Ganesh Gupta Visit

نظام آباد (اسلم فاروقی) نظام آباد شہر ترقی کی سمت گامزن ہے۔ ٹی آر ایس حکومت عوامی ضروریات کے کام انجام دے رہی ہے۔ شہر میں تمام بلدیاتی کام انجام دیتے ہوئے اسے بہت جلد اسمارٹ سٹی بنادیا جائے گا۔ جس شہر میں زیر زمین ڈرینیج نہیں ہوگا وہ کیسے اسمارٹ سٹی بنے گا اس لئے میں نظام آباد میں بند پڑے زیر زمین ڈرینیج نظام کو دوبارہ انجام دینے کے کام کو شروع کرایا ہوں اور بودھن روڈ پر بڑے پائپ نصب کرنے کا کام صبح شام چل رہا ہے۔

نظام آباد وہ ضلع ہے جہاں روزانہ پینے کا پانی فراہم ہورہا ہے یہ ہماری خوش قسمتی ہے کہ منصوبہ بندی سے کئے گئے کام کی بدولت نظام آباد کو پانی سربراہ کرنے والا ذخیرہ آب علی ساگر پانی سے لبریز ہے اور شدید گرمی ہونے کے باوجود سارے شہر کو وافر مقدار میں پانی سربراہ کیا جارہا ہے جو اگلے کئی ماہ تک جاری رہے گا۔ نظام آباد میں اقلیتوں سے متعلق جو بھی مسائل ہیں انہیں حل کئے جائیں گے۔ پانی کی ٹانکی کالج کی عمارت کا استعمال ہوگا ہم کرائے کی عمارتوں میں اقلیتی مدارس چلا رہے ہیں اگر ضرورت ہو تو اس عمارت میں اقلیتوں کا انگریزی میڈیم اسکول منتقل ہوگا۔نظام آباد میں اردو گھر کی تعمیر کا مطالبہ ہے اردو اکیڈیمی کی عمارت کو ترقی دینے یا کسی اور علاقے میں اردو گھر تعمیر کیا جائے گا۔

ان خیالات کا اظہار رکن اسمبلی اربن نظام آباد جناب بیگالہ گنیش گپتا نے اقلیتوں اور اردو دانوں سے ملاقات پروگرام کے دوران مالا پلی عقب پانی کی ٹانکی کے قریب اردو کے نامور شاعر جناب جمیل نظام آبادی کے گھر پروگرام سے خطاب کے دوران کیا۔ اس پروگرام کا انتظام ٹی آر یس اقلیتی قائد جناب ظفر خان نے کرایا۔ اقلیتوں اور اردو دانوں کی بڑی تعداد سے خطاب کرتے ہوئے رکن اسمبلی نے کہا کہ عوام سے ملاقات ہوگی تو عوام کے مسائل معلوم ہوں گے اور عوام کی خدمت کا موقع ملے گا لوگ انتخابات کے بعد رکن اسمبلی سے ملنے میں ناکام رہتے ہیں لیکن میں خود روز اقلیتوں اور دیگر علاقوں میں دورہ کر رہا ہوں اور عوامی مسائل سے آگہی حاصل کر رہا ہوں انہوں نے ترقیاتی کاموں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ نظام آباد میں معیاری سڑکیں تعمیر کی جائیں گی۔ تمام چوراہوں پر ہائی ماسٹ لائٹ ٹاور لگائے جائیں گے۔ شادی مبارک اسکیم میں رقم بڑھادی گئی ہے۔

اقلیتی اسکول کامیابی سے چلائے جارہے ہیں ۔مسلمانوں کے لئے 12فیصد تحفظات کا بل پاس کرنا بڑا کارنامہ ہے اسے ہم انجام تک پہونچائیں گے انہوں نے اردو میڈیم اسکولوں پر اساتذہ کے تقررات اردو کو سرکاری زبان بنانے کے اقدامات اور اردو دفاتر اور عمارات پر اردو لکھانے کا تیقن دیا۔ قبل ازیں جناب جمیل نظام آبادی اور دیگر شعرا ور ادیبوں نے رکن اسمبلی جناب بیگالہ گنیش گپتا کی مالا پلی اقلیتی علاقے میں آمد پر خیر مقدم کیا۔ جناب جمیل نظام آبادی نے سب سے پہلے اردو شعرا ادیبوں صحافیوں اور اساتذہ جناب چکر نظام آبادی ‘ تمیم نظام آبادی ‘ ڈاکٹر رضی شطاری ‘شریف اطہر’ اشفاق اصفی’ رحیم قمر صدر ادارہ ادب اسلامی نظام آباد’ ڈاکٹر محمد اسلم فاروقی صدر شعبہ اردو گری راج کالج نظام آباد’ ڈاکٹر جاوید’ ڈاکٹر سمیع امان اور دیگر کا رکن اسمبلی سے تعارف کرایا۔ جناب جمیل نظام آبادی نے رکن اسمبلی کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا کہ اگلی بار جب وہ یہاں آئیں تو امید ہے کہ ریاستی وزیر ہوں گے۔ انہوں نے شال پوشی اور گلپوشی کے ذریعے رکن اسمبلی کو تہنیت پیش کی۔ اس موقع پر جمیل نظام آبادی کے افسانوی مجموعے کی رسم اجرا انجام دی گئی۔

ڈاکٹر محمد اسلم فاروقی نے خطاب کرتے ہوئے 12فیصد تحفظات کے بل کی منظوری پر مسلمانوں کی جانب سے حکومت تلنگانہ کا شکریہ ادا کیا انہوں نے مالا پلی کی جونیر کالج عمارت میں کالج کی منتقلی ‘ اردو گھر کی عاجلانہ تعمیر’ نظام آباد پدا پلی کے درمیان تما م ریلوے اسٹیشنوں پر اردو نام کی لکھائی’تمام سرکاردی دفاتر کے بورڈ پر اردو لکھانے’اردو اساتذہ کے تمام پوسٹو ں پر تقررات کو یقینی بنانے اردو کو عملی طور پر سرکاری زبان بنانے کے اقدامات کرنے پر زور دیا انہوں نے تجویز رکھی کہ تلنگانہ میں اردو ماحول کو پروان چڑھانے تلگو میڈیم مدارس میں اردو زبان کی تعلیم کا سلسلہ شروع کیا جائے۔

ڈاکٹر سمیع امان نے جمیل نظام آبادی کی چالیس سالہ اردو خدمات کا تعارف پیش کیا جناب ظفر خان نے کہا کہ اقلیتوں کو مال و دولت کی نہیں ترقی کی ضرورت ہے ان کے مسائل کو حکومت حل کرے یہی کافی ہے انہوں نے رکن اسمبلی کی مسلم علاقوں میں آمد کو خوش آئیند قرار دیا۔ جناب چکر نظام آبادی’ڈاکٹر رضی شطاری اور دیگر شعرا نے اشعار کی پیشکشی کے ذریعے رکن اسمبلی کو خراج پیش کیا۔ ڈاکٹر سمیع امان کے شکریے پر اقلیتوں سے ملاقات پروگرام اختتام کو پہونچا بعد میں رکن اسمبلی نے گرلز جونیر کالج کے لئے بنی سرکاری عمارت کا معائنہ کیا اور جلد سے جلد اسے اقلیتوں کے لئے استعمال کا تیقن دیا۔