پارہ: الم 1 سورةالبقرة مدنیہ رکوع 10 آیت 83 سے 86

Quran

Quran

تحریر : شاہ بانو میر

یاد کرو اسرائیل کی اولاد سے ہم نے پختہ عہد لیا تھا

کہ

اللہ کے سوا کسی کی عبادت نہ کرنا

ماں باپ کے ساتھ رشتے داروں کے ساتھ یتیموں اور مسکینوں کے ساتھ نیک سلوک کرنا

ٌلوگوں سے بھلی بات کہنا

نماز قائم کرنا

اور

زکوة دینا

مگر تھوڑے آدمیوں کے سوا تم سب اس عہد سے پھر گئےـ

اور

اب تک پھرے ہوئے ہو

پھر ذرا یاد کرو

ہم نے تم سے مضبوط عہد لیا تھا

کہ آپس میں ایک دوسرے کا خون نہ بہانا

اور

نہ ایک دوسرے کو گھر سے بے گھر کرنا

تم نے اس کا اقرار کیا تھا

تم خود اس پر گواہ ہو

مگر آج وہی تم ہو

کہ

اپنے بھائی بندوں کو قتل کرتے ہو

اپنی برادری کے کچھ لوگوں کو بے خانماں کر دیتے ہو

ظلم و زیادتی کے ساتھ ان کے خلاف جتھے بندیاں کرتے ہو

اور

جب وہ لڑائی میں اکڑے ہوئے تمہارے پاس آتے ہیں

ٌتو ان کی رہائی کیلیۓ فدیہ کا لین دین کرتے ہو

حالانکہ

انہیں ان کے گھروں سے نکالنا ہی سرے سے تم پر حرام تھا ـ

تو کیا تم کتاب کے ایک حصے پر ایمان لاتے ہو

اور

دوسرے حصے کے ساتھ کفر کرتے ہو؟

پھر تم میں سے جو لوگ ایسا کریں ان کی سزا اس کے سوا اور کیا ہے

کہ

دنیا کی زندگی میں ذلیل و خوار ہو کر رہیں

اور

آخرت میں شدید ترین عذاب کی طرف پھیر دیے جائیں

اللہ ان حرکات سے بے خبر نہیں ہے

جو تم کر رہے ہو

یہ وہ لوگ ہیں جنہوں نے آخرت بیچ کر دنیا کی زندگی خرید لی ہے

لہٰذا

نہ ان کی سزا میں کوئی تخفیف ہو گی

اور نہ انہیں کوئی مدد پہنچ سکے گیـ

Shah Bano Mir

Shah Bano Mir

تحریر : شاہ بانو میر