رواں سال میں بحیرہ روم اور خشکی سے یورپ جانے کے لیے پناہ گزین اپنی زندگیوں کو داو پر لگانے کے عمل کا جاری رکھے ہوئے ہیں

Refugees

Refugees

پیرس (زاہد مصطفی اعوان) انٹر نیشنل آرگنائزیشن فار مائیگریشن (IOM)نے اطلاع دی ہے کہ یورپ کی بحیرہ روم کے کنارے واقع سرحدیں پناہ گزینوں کے لیے “جان لیوا ترین” علاقے ہونے کی خصوصیت کو برقرار رکھے ہوئے ہیں۔اقوام متحدہ کے اعداد وشمار کے مطابق امسال کسی دوسرے ملک میں پناہ لینے کی کوشش کے دوران راستوں میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 5 ہزار 80 ہے۔

آئی او ایم کی رپورٹ کے مطابق ان پناہ گزینوں کی اکثریت سمندر میں ڈوب کر یا پھر خشک علاقوں سے گزرتے وقت پیاس سے ہلاک ہوئی ہے۔رپورٹ کے مطابق تقریباً تین ہزار افراد بحیرہ روم کے راستے یورپ جانے کی کوشش کے دوران جان بحق ہوئے ہیں۔

رپورٹ میں مزید واضح کیا گیا ہے کہ جنوری 2000 سے ابتک بحیرہ روم میں ڈوبنے والے پناہ گزینوں کی تعداد 33 ہزار 800 ہے۔